ویلڈن بابراعظم : آسٹریلیا کو سیریز میں شکست دے کر ایسا اعزاز اپنے نام کر لیا جو ویرات کوہلی بھی ابھی تک حاصل نہیں کر سکے

دبئی (سٹار ایشیا نیوز اسپیشل) پاکستان نے گزشتہ روز آسٹریلیا کو ٹی ٹوینٹی میچ میں شکست دے کر سیریز میں کلین سویپ کر دیا ہے اور اس کے ساتھ ہی پاکستانی بلے باز بابراعظم ٹی ٹوینٹی کرکٹ میں نمبر 1 بلے باز بن گئے ہیں ۔ تفصیلات کے مطابق بابراعظم نے آسٹریلیا کیخلاف سیریز میں 68، 45 اور 50 رنز کی اننگ کھیلی جس کے بعد وہ اب آئی سی سی کی نئی ٹی ٹوینٹی ریکنگ میں پہلے نمبر پر پہنچ گئے ہیں ۔انہوں نے سیریز میں مجموعی طور پر 117.26 کی اوسط سے 163 رنز بنائے اور پانچویں نمبر سے پہلے نمبر پر پہنچ گئے ہیں ۔جبکہ آسٹریلیا کے ایرون فنچ پانچویں نمبر پر آ گئے ہیں اور اس کے علاوہ پاکستان کے مایہ ناز بلے باز فخر زمان کو بھی تنزلی ملی ہے اور وہ تین درجہ کی تنزلی کے بعد پانچویں نمبر پر پہنچ گئے ہیں حال ہی میں انگلینڈ کے کھلاڑی جیسن روئے نے سری لنکا کیخلاف سیریز میں 36 گیندوں پر 69 رنز بنائے جس کے بعد وہ آئی سی سی کی رینکنگ میں پانچ درجے بہتری کے بعد 9 وین پوزیشن پر آ گئے ہیں ۔دوسری جانب ایک خبر کے مطابق پاکستان کے خلاف سیریز سے قبل ہی کیویز کی دھڑکنیں تیزہونے لگیں، بیٹنگ کوچ کریگ میک ملن نے گرین شرٹس سے گرم مرطوب کنڈیشنز میں مقابلے کو بڑا چیلنج قراردے دیا ، وہ کہتے ہیں کہ کھلاڑیوں کو ماحول سے ہم آہنگ کرنے کیلیے سخت محنت کررہے ہیں، سرخ بال سے کھیل کر آنے والوں کو سفید بال کی کرکٹ میں ڈھالنا بھی مشکل کام ہے۔ تفصیلات کے مطابق نیوزی لینڈ کی ٹیم نے آخری مرتبہ انٹرنیشنل کرکٹ مارچ میں کھیلی اوراب طویل وقفے کے بعد کیویز متحدہ عرب امارات میں پاکستان کے خلاف مکمل سیریزکھیلنے والے ہیں، جس میں تمام فارمیٹس کے3، 3 میچز کھیلے جائیں گے، اس ٹور کا آغاز بدھ سے ٹوئنٹی 20 ے ہوگا۔ کچھ کھلاڑیوں کو اس عرصے میں زیادہ کرکٹ کھیلنے کونہیں ملی اور یہی چیز بیٹنگ کوچ کریگ میک ملن کیلیے پریشانی کا باعث بھی بنی ہوئی ہے انھوں نے تسلیم کیا ہے کہ کیویزکیلیے یو اے ای کی گرم مرطوب کنڈیشنز سے ہم آہنگ ہونا کسی چیلنج سے کم نہیں جبکہ وہ کھلاڑیوں کی تیاری کیلیے مختلف طریقے استعمال کررہے جن میں رات کو پریکٹس بھی شامل ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ ہمارے بہت سے کھلاڑی سرخ گیند سے چار روزہ کرکٹ کھیل کر یہاں آئے ہیں انھیں واپس سفید بال اور خاص طور پر ٹوئنٹی 20 کے ماحول میں لے جانا کافی مشکل ہے، اس لیے ہم انھیں ٹریننگ کے دوران مختلف فرضی صورتحال میں ڈالتے ہوئے پریشر میں لانے کی کوشش کرتے اور یہ دیکھتے ہیں کہ وہ کیسا ردعمل دیتے ہیں، گرم کنڈیشنز میں کھیلنا ہمارے بیٹسمین اور بولرز دونوں کے لیے مختلف تجربہ ہوگا، ان کیلیے بہتریہی ہے کہ وہ جلد سے جلد ماحول سے ہم آہنگ ہوں، ان کا کچھ پسینہ نکلے تاکہ وہ بدھ سے شروع ہونے والی سیریزکیلیے مکمل طور پر تیارہوں۔میک ملن خاص طور پر اپنے ان پلیئرز پر بہت زیادہ انحصار کررہے ہیں جوکہ راوں برس مختلف ممالک میں ٹوئنٹی20 لیگزکھیل چکے ہیں، وہ کہتے ہیں کہ ہمارے بہت سے کھلاڑیوں نے آئی پی ایل، سی پی ایل ،انگلش ٹی 20 بلاسٹ وغیرہ میں صلاحیتوں کے جوہردکھائے اور ہم کہہ سکتے ہیں کہ ہمارے پاس اس فارمیٹ کے تجربہ کار کھلاڑی موجود ہیں۔

- Advertisement -

You might also like

- Advertisement -